وقت کا بہتر استعمال : کامیابی کی ضمانت



نیاز سواتی
niazhussain.swati@yahoo.com
(۱)

وقت زندگی ہے ۔ وقت وہ چیز ہے جس کی قسم اللہ نے اپنے پاک کلام میں کھا ئی ہے ۔ وقت کا بہتر استعمال اس کی منصوبہ بندی اور ترجیحات کے تعین میں پوشیدہ ہے ۔وقت کی منصوبہ بندی اور اس کا بہتر استعمال ہمارے اہداف کو ممکن بناتا ہے۔ کسی دانا کا کہنا ہے کہ جو شخص کامیابی کی منصوبہ بندی نہیں کرتا وہ دراصل ناکامی کی منصوبہ بندی کررہا ہوتا ہے۔ وقت کا بہتر استعمال ایک فن ہے جو کچھ مہارتوں کی اجتماعی شکل ہے ۔ وقت کی منصوبہ بندی ،تقسیم اور ترجیحات کا تعین وہ عوامل ہیں جو وقت کے بہتر استعمال کو ممکن بناتے ہیں ۔
نظم و ضبط کی صفات سے متصف افراد وقت کی منصوبہ بندی میں کامیاب رہتے ہیں ۔ شروع میں تو ایک شخص اپنے دن کو مختلف پہروں کے لحاظ سے تقسیم کرنے کے قابل ہوتا ہے مگر اس مشق کے ذریعے بتدریج وہ وقت آتا ہے جب اس فرد کے لیے اپنے ایک ایک لمحے کی منصوبہ بندی ممکن ہوجاتی ہے ۔ اس سلسلے میں ترجیحات کا تعین ، وقت کے بہتر استعمال کی عمارت کا پتھر ثابت ہوتا ہے۔ ضروری کاموںکو التواءمیں رکھنے کی روش ہمارے اہداف کے حصول کو مشکل تر بنادیتی ہے ۔ اگر ہم اپنے کاموں کی درجہ بندی مندرجہ ذیل تین حصوں کے حساب سے کریں تو وقت کے ضیاع کو بڑی حد تک روکا جاسکتا ہے۔
۱) پہلے حصے میں وہ کام رکھے جائیں جو فوری اہمیت کے حامل ہوں ۔
۲) دوسرے حصے میں ایسے اہداف رکھے جائیں جو اہم تو ہوںمگر فوری اہمیت کے حامل نہ ہوں۔
۳) تیسرے اور آخری حصے میں وہ کام رکھے جائیں جونہ تو اہمیت کے حامل ہوں اور نہ ہی فوری توجہ کے متقاضی۔

اس طرح اہداف کی تقسیم وتفہیم کے نتیجے میں ہم نہ صرف اپنی ترجیحات کا تعین باآسانی کرسکتے ہیںبلکہ وقت ضائع کرنے والے امورکا تعین کرکے ان کا سدباب بھی کرسکتے ہیں ۔ اس سلسلے میں یہ بات بھی بے حد اہم ہے کہ ہم غیر ضروری اور ناقابل عمل کاموں اور فرمائشوں کے لیے ©”نہ “ کہنے کا سلیقہ بھی سیکھیں مزید یہ کہ اس طرح ہم ضروری اور اہم کاموں کو فرصت کے لمحات کے لیے اٹھارکھنے کی روش سے بھی باز رہتے ہیں۔ وقت کی منصوبہ بندی کرتے ہوئے سالانہ تقویم( کلینڈر) ، کاموں کی فہرست اور تبنیہات (الارم) کے استعمال کی بہت اہمیت ہے۔ مذکورہ بالا آلات کا استعمال ہمیں اپنی راہ سے ہٹنے نہیں دیتا ۔ اس طرح ہم تمام طے کردہ اہداف بروقت مکمل کرنے کے قابل ہوجاتے ہیں ، اس طرح آہستہ آہستہ وقت کی منصوبہ بندی اور اس کے بہترین استعمال کا مرحلہ ہمارے لیے آسان ہوجاتا ہے ۔
آخر ی بات یہ ہے کہ وقت کی منصوبہ بندی ، اس کی بچت اور اس کے بہترین استعمال کے لیے تمام تر ذرائع اختیار کرنے کے بعد خالق اعصار سے اپنے تمام اہداف کی تکمیل کے لیے دعا ضرور مانگنی چاہیے کیوں کہ محض اللہ کی مدد سے ہی ہمارا وقت بچ سکتا ہے ۔ بعض اوقات ایسا ہوتا ہے کہ ہم کسی کام کے لیے وقت مختص کرتے ہیں تو وہ کام وقت صرف کیے بغیر خود ہی تکمیل تک پہنچ جاتا ہے مثلاً ہمیں اپنے شہر کے دوسرے سرے پر رہنے والے کسی دوست سے ضروری ملنا تھا ،یہ کام کئی گھنٹوں کے وقت کا متقاضی ہے مگر بعض اوقات ایسا بھی ہوتا ہے کہ ہمارامذکورہ دوست خودہی اپنے کسی کام کے سلسلے میںخود ہم سے ملنے آجاتا ہے تواس طرح ہمارا بہت سا وقت اور سرمایہ بفضل تعالیٰ بچ جاتا ہے ۔ اللہ تعالیٰ ہمارے اہداف کی بروقت تکمیل ممکن بنا دے ۔ آمین

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s